بچوں کا پیٹ درد 30 منٹ میں ختم

اکثر اوقات بچوں کےپیٹ میں درد شروع ہوجاتا ہے

جس کی وجہ سے بچے رونا شروع کردیتےہیں۔ آپ کے بچے میں پیٹ میں درد زیادہ تر گیس یا قبض کی وجہ سے ہوتا ہے۔ پیٹ کے درد کا مسئلہ بچے کی پیدائش کےتین ماہ کے بعد شروع ہوجاتاہے۔ یہ گیس اور قبض ماں کے کھانے کےاوپرمنحصر کرتا ہے۔ بچے کے پیٹ میں گیس کی سب سے بڑی وجہ ماں کے کھانے سے ہوتی ہے۔ اگر ماں کوئی ایسی چیز کھالیتی ہے جو کہ گیس پیدا کرتی ہے جب ماں دودھ پلاتی ہے تو یہی تکلیف اکثر بچے کو بھی برداشت کرنی پڑتی ہے۔ قبض اور گیس کی وجہ سے بچہ شدید تکلیف میں مبتلا ہوتا ہے۔ جس کی وجہ سے وہ رونا شروع کردیتا ہے۔ اس لیے آپ سے گزارش ہے کہ اگر آپ اپنے بچوں کو دودھ پلاتی ہیں۔ تواپنی صحت کے ساتھ ساتھ اپنے لیے اچھی غذا کا بھی انتخاب کریں۔ کوشش کیا کریں کہ گوبھی ،کریلہ،ایسی چیز جس میں کیفین میں زیادہ مقدار میں پائی جاتی ہے۔ اور دال ماش کو اپنی خوراک میں کم سے کم استعمال کریں۔ کیونکہ اکثر ان کی وجہ سے گیس کا مسئلہ پیدا ہوتا ہے۔ ا س کے ساتھ ساتھ خشک میوہ جات کا بھی کم سے کم استعمال کریں۔ مثال کے طور پر بادام ، اخروٹ،کشمش اور انڈے وغیرہ ۔ کیونکہ اس کے زیادہ استعمال کرنےسے آپ کے بچے کو الرجی اور خارش کا مسئلہ ہوسکتا ہے۔ آپ کی اچھی خوراک آپ کے بچے کی اچھی صحت کی ضامن ہوتی ہے۔ اس لیے آ پ کےلیے ایک بہترین نسخہ لےکر حاضر ہوئے ہیں۔ اس کو استعمال کرنے کےبعد آپ کے بچے کے پیٹ کا درد آسانی کےساتھ ختم ہوجائےگا۔ اور اس کے ساتھ ساتھ آپ کو کچھ احتیاطی تدابیر بھی کرنی پڑیں گی۔ اگرآپ ان احتیاطی تدابیر پر عمل کریں ۔ انشاءاللہ! آپ کے بچوں کو کبھی گیس اور بدہضمی کا مسئلہ درپیش نہیں آئےگا۔ اس نسخے کو بنانے کےلیے ہمیں جن اجزاء کی ضرورت ہے وہ یہ ہیں۔ شہدآدھا چائے کاچمچ، الائچی کا دانہ دو عدد، سونف دودانے لینے ہیں۔ اس کے ساتھ آپ نے ایک گلاس پانی لے لینا ہے۔اور اس کو بنانےکےلیے ان تمام اجزاء کو پانی میں ڈال کر اچھی طرح ابال لیں۔ جب پانی آدھا گلاس بچ جائے تو اس کوچھان کر پانی کو نارمل ہونے دیں۔ اور ایک چمچ پانی بچوں کوصبح اور شام پلائیں ۔ انشاءاللہ! ایک دو بار استعمال کرنے کے بعد آپ کے بچے کی بدہضمی اور پیٹ کی گیس مکمل طور پر ختم ہو جائےگی ۔ اس کے علاوہ آپ کے بچے کی گیس ، قبض ، بدہضمی یہ تمام مسائل صرف دودنوں میں رفع ہوجائیں گے۔ اور آپ کا بچہ پھر سے کھیلنے اور مسکرانے لگے گا۔ بچوں کو دودھ پلانے کےبعدکندھے پر ڈال کردودھ ہضم لازمی کرائیں۔ اس کے علاوہ کم سے کم ایک مہینے کے بعد بچوں کے فیڈرز کے نپلز تبدیل کردیں۔ اور ہفتے میں ایک بار بچوں کے فیڈرز کو گرم پانی میں پندرہ منٹ تک ڈبو دیا کریں۔ تاکہ تمام بیکٹیریااور جراثیم کا خاتمہ ہوجائے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.